کمرے میں بیٹھ کر رباب بجا سکتا تھا،مگر گھر والوں کے سامنےنہیں”

0

جنید شاہ سوری

کراچی:ضلع بونیر سے تعلق رکھنے والے محسن حیات کراچی کے علاقے ڈیفینس میں رہائش پذیر ہے۔نمائندہ باجور ٹائمز جنید شاہ سوری نے محسن حیات کی رباب سے جڑی کہانی کچھ اس طرح دریافت کی۔ پڑھئیے محسن حیات کی خود کی زبانی۔۔۔

محسن حیات کہتے ہیں ڈپریشن ختم کرنے کے لیے رباب بجانا شروع کیا اور پھر اِسی کے سرور میں دبتا گیا۔ ریشمی تاروں سے بجنے والا رباب زخمی دلوں کو بھرپور طریقے سے مطمئن کردیتا ہے۔ یہ ایک ایسا سمندر ہے دوبتے جاوں گے مگر یہ نامکمل رہے گا۔رباب کا ایک بڑا تعلق دل کی سہریلا رگوں سے ہے۔

انہوں نے کہا کہ چھپ کر بند کمرے میں رباب بجاتا ہوں گھر والے اس شوق کو برا سمجھتے ہیں۔ میں سمجھتاہوں رباب دل کی راحت اور طبلہ زہنی سکون کی مانند ہے۔ رباب کا شوق گاوں سے جنم لیا تھا اور اس کی دھند نے مجھے اس وقت سہریلا کردیا۔اب رباب دل کے ساتھ لگن رکھتاہے۔

Rabab| Mohsan Hayat | Local | Story by Junaid Shah Sori

محسن حیات کہتے ہیں ڈپریشن ختم کرنے کے لیے رباب بجانا شروع کیا اور پھر اِسی کے سرور میں دبتا گیا۔ ریشمی تاروں سے بجنے والا رباب زخمی دلوں کو بھرپور طریقے سے مطمئن کردیتا ہے۔ یہ ایک ایسا سمندر ہے دوبتے جاوں گے مگر یہ نامکمل رہے گا

Posted by Bajaur Times on Tuesday, December 4, 2018

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.