مذاکرات بحال، افغانستان سے غيرملکی افواج کے انخلاء کا شيڈول طے ہونے کا امکان

افغان طالبان نے افغانستان کے ليے امريکا کے خصوصی مندوب زلمے خليل زاد سے قطر ميں ملاقات کی ہے۔

غیرملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق قطر کے دارالحکومت دوحہ میں افغان طالبان رہنماؤں اور زلمے خلیل زاد کی ملاقات کے ساتھ افغان طالبان اور امریکہ کے مابین اختلافات اور تعطلی کے شکار امن مذاکرات رواں ہفتے کے آغاز سے بحال ہو گئے ہيں۔

رپورٹس کے مطابق افغان طالبان کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے ملاقات کی تصدیق کی ہے اور اس حوالے سے اپنے ایک بيان ميں کہا ہے کہ طالبان رہنماؤں اور امريکی اہلکاروں کے مابين مذاکرات قطر ميں آج سے شروع ہو گئے ہيں۔

رپورٹس میں کہا گیا کہ قطر ميں ہونے والی اس ملاقات کے حوالے سے فی الحال زيادہ تفصيلات سامنے نہیں آئی ہیں تاہم امن مذاکرات سے وابستہ ايک ذريعے نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتايا کہ پير کو قطر ميں ہونے والے مذاکرات ميں طالبان کے ايک ديرينہ مطالبے پر بھی بات چيت جاری ہے اور امکان ہے کہ ملاقات میں افغانستان سے غيرملکی افواج کے انخلاء کا طريقہ کار اور شيڈول بھی طے کر لیا جائے گا۔

واضح رہے کہ افغانستان ميں گزشتہ 17 برس سے جاری جنگ کے خاتمے اور قيام امن کے ليے مذاکراتی عمل صدر ٹرمپ کی درخواست پر پاکستان کی کوششوں سے بحال ہوا تھا۔

تاہم گزشتہ چند دنوں سے اختلافات کے سبب مذاکراتی عمل تعطلی کا شکار رہا اور گزشتہ ہفتے طالبان نے افغانستان کے ليے خصوصی مندوب زلمے خليل زاد سے پاکستان ميں ملاقات کرنے سے انکار کردیا تھا۔

دوسری جانب طالبان نے افغان حکام کی شمولیت کو بھی مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ ہم کابل حکومت کے نمائندوں کے ساتھ مذاکرات پر قطعی طور پر راضی نہيں۔

ٹی این این اردو

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.