استقبال رمضان

شاہ فیصل ناصر ضلع باجوڑ

چند دن بعد ھماری اوپر رمضان المبارک کا عظیم اور بابرکت مہینہ سایہ فگن ہورہی ہے۔ یہ مسلمانوں کیلئے بہت فائدے اور غنیمت کا مہینہ ہے۔ اسے
نیکیوں کا موسم بہار بھی کہاجاتا ہے، جس میں مسلمان کو اللہ کی عبادت اور نیک اعمال کا موقع ملتا ہے اور اس کا اجروثواب بھی کئی گنّا زیادہ دیا جاتا ہے۔ رسول اللہﷺ رمضان کی آمد سے قبل صحابہ کرام رضوان اللہ علیھم اجمعین کو ترغیب دیتے، تاکہ لوگ پہلے سے تیار ہوکر اس موقع سے بھرپورفائدہ اٹھائے۔ اور اس کا ایک لمحہ بھی غفلت سے نہ گذر جائے۔ ان قیمتی اوقات تک پہنچنے کیلئے اللہ تعالی سے دعا مانگنا چاہیئے۔ سلف علماء کرام کی متعلق آتا ہے کہ وہ چھ ماہ سے یہ دعا مانگتے،” أللّهمّ بَلّغنا رَمضَان” اے الله ھمیں رمضان تک پہنچادیں۔ پھر رمضان كے بعد پانچ ماہ تک يہ دعا كرتے رہتے، اے اللہ ہمارے رمضان كے روزے قبول و منظور فرما.
رمضان المبارک کی استقبال کیلئے سب سے پہلا کام ھمیں یہ کرنا چاہیے کہ ھم رمضان کے مقام، اس کے پیغام، اس کے مقصد اور اس کی عظمت و برکت کے احساس کو دل میں تازہ کریں۔ اور اس بات کی نیت کریں کہ اس مہینے میں ھم جن معمولات اور عبادات کا اھتمام کریں گے ان سے اپنی اندر وہ تقوی پیدا کرنے کی کوشش کریں گے جو روزے کا حاصل ہے اور جو ھمیں اللہ تعالی کے دین کے تقاضوں اور قرآن مجید کے مشن کو پورا کرنے کے قابل بناسکے ۔
رمضان المبارک کی مہینہ سے بھرپور فائدہ حاصل کرنے کیلئے ضروری ہے کہ چند ضروری باتوں کا خیال رکھا جائے۔

1) سچی توبہ کرنا:-
اس مبارک مہینہ کی داخل ھونے سے قبل ضروری ہے کہ انسان اپنی پچھلے گناہوں سے سچی توبہ کرلیں، حقوق العباد کی ادائیگی کریں اور اخلاص کیساتھ نیک اعمال کی طرف متوجہ ہو جائے ۔
2) عزم صميم اور نيت خالص:-
ابهى سے صحیح نیت کیساتھ عزم کریں کہ ان شااللہ میں اس مبارک مہینے میں نیک اعمال کی ذریعے اپنی رب کی خوشنودی حاصل کرنے کی کوشش کروں گا۔ رمضان کے روزے، قرآن کریم کی تلاوت، قیام اللیل اور تراویح کی اھتمام کے ساتھ پابندی کروں گا۔ غریبوں کے ساتھ مالی تعاون کروں گا۔ اور ھر قسم کی گناھوں سے بچنے کی کوشش کروں گا ۔
3) غیر ضروری کاموں سے اجتناب:-
فضول اور باطل اعمال و اقوال سے ھر وقت بچنا چاہیے، لیکن رمضان کی مہینہ میں بہت احتیاط ضروری ہے ۔ کیونکہ اس سے روزہ ضائع ہونے کا خدشہ ہوتا ہے۔ جو اعمال رمضان ميں عبادت كرنے ميں ركاوٹ كا باعث بننے والے ہوں انہيں رمضان سے قبل نپٹایا جائے۔ تاکہ پھر یکسوئی کیساتھ عبادت کیا جائے مثلا گھر کیلئے خریداری وغیرہ رمضان شروع ہونے سے پہلے کیا جائے۔
4) صبر و تحمل: –
رمضان صبر و تحمل کا مہینہ ہے۔ یعنی اللہ کی حکم ماننے ، بھوک و پیاس اور تکلیف برداشت کرنے پرصبر کرنا حلال خوراک اور جائز شھوت پوری کرنے سے صبر کرنا۔ یہ اسلئے تاکہ انسانی نفس تربیت حاصل کرکے آئندہ کیلئے حرام سے صبر کرسکیں۔
5) ھمدردی اور انفاق:-
رمضان خصوصی طور پر غریبوں کیساتھ ھمدردی اور تعاون کا مہینہ ہے۔ چنانچہ عائشہ صدیقہؓ فرماتی ہے کہ رسول اللہﷺ رمضان کی مہینے میں بہت زیادہ خرچ کیا کرتے تھیں۔ اسلئے ھمیں بھی غریبوں کی مالی مدد کرنا چاہیے، ان کی ضروریات پوری کرنا اور انہیں اپنے ساتھ افطاری میں شریک کرنا چاہیے ۔
6) قرآن کے ساتھ تعلق: –
نزول قرآن کی ابتداء رمضان میں ہواہے۔ اسلئے یہ قرآن کا مہینہ ہے۔ نبیﷺ اور صحابہ کرام اس مہینے میں قرآن کی تلاوت ،تدبر اور قیام اللیل میں اس کی قرأت کی خصوصی اھتمام فرماتے۔ آپﷺ کے پاس جبریل آکر قرآن کریم ایک دوسرے کو سناتیں۔ ھمیں بھی اس ماہ مبارک میں قرآن کریم کی تلاوت، ترجمہ و تفسیر اور تراویح میں اس کا پڑھنے یا سننے کی اھتمام کرنا چاہیئے۔
7) ذکر واذکار کی کثرت:۔
رمضان کی اس بابرکت مہینے میں فضول باتوں کی بجائے اللہ کی ذکر کثرت سے کرنا چاہئے ۔ رسول اللہﷺ فرماتے کہ تم لوگ اس مہینے میں چار چیزوں کی کثرت رکھا کروں۔ کلمہ طیبہ (لاإله إلا الله)، استغفار، جنت کی طلب اور جھنم کی آگ سے پناہ مانگنا۔ غرض موقع ملتے ہی اللہ کا ذکر کرنا چاہیے ۔
8) دعاؤں کا اھتمام: –
رمضان المبارک میں اللہ تعالی اپنے بندوں کے طرف خصوصی توجہ فرماتے ہیں اور اپنے روزہ دار بندوں کے دعائیں قبول کرتے ہیں۔ خصوصا افطار اور سحری کے اوقات میں۔ اسلئے ان اوقات میں دعا کا اھتمام کرنا چاہیں اور اللہ تعالی سے اپنے تمام ضروریات مانگنا چاہیئے۔
9) آخری عشرہ کی اھتمام: –
رمضان کا پورا مہینہ اللہ کا انعام ہے۔ اس کا پہلا عشرہ رحمت، دوسرا مغفرت اورتیسرا جھنم کی آگ سے نجات کا ذریعہ ہے۔ لیکن احادیث مبارکہ میں اس آخری عشرے کی خصوصی فضائل بیان ہوئے ہیں۔ کیونکہ اسمیں لیلةالقدرکی عظیم رات ہے۔ اور اعتکاف کی عبادت بھی اس عشرے کیساتھ خاص ہے۔ اسلئے آخری عشرے کے دوران عبادت میں پوری کوشش کرنا چاہئیں۔
الله تعالى ھمیں صحیح طریقے پر روزے رکھنے کی توفیق عطا فرمائے اور ھمارے تمام نیک اعمال کو قبول فرماویں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.