حکومت کی ناقص منصوبہ بندی کی وجہ سے تعلیم یافتہ بے روزگار نوجوان خودکشیوں پر مجبور.

0

باجوڑ –وقت کے تقاضوں کو دیکھتے ہوئے انسانوں کی تقاضے بھی بدلتے رہتے ہیں, ایک طرف جہاں تعلیم کا بنیادی مقصد اپنی اور دوسروں کی رہنمائی , اچھے اور برے کی پہچان ہوا کرتا ہے  تو دوسری طرف اس کا مقصد بہتر مستقبل کا خواب ہوتا ہے. عصر حاضر میں زیادہ تر نوجوانوں کا تعلیم سے اپنے مستقبل کی بہتری مقصود ہوتی ہے.

لیکن بدقسمتی سے حکومت کی ناقص منصوبہ بندی کی وجہ سے یہ مقصد تعلیم یافتہ نوجوانوں سے کھو گیا ہے.جس کی وجہ سے  تعلیم یافتہ نوجوان بے روزگاری کا عذاب برداشت کرنے کی سکت نہ ہونے کی وجہ سے خودکشیوں پر مجبور ہیں.ماحول کے اثر کو قبول کرتے ہوئے بے روز گار نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد منشیات اور آئس نشہ کی لت میں مبتلا ہورہے ہیں.

مملکت خداداد پاکستان جہاں ساٹھ فیصد آبادی نوجوانوں پر مشتمل ہیں جن کو روزگار دے کر ان کے ٹیلنٹ سے فائدہ اٹھاتے ہوئے  پاکستان کی معاشی صورت حال پر قابو پایا جاسکتا ہے , لیکن بدقسمتی سے حکومت ایسا نہیں کر پا رہی …

مزید: آگرہ ماموند، نامعلوم افراد کی گاڑی پر فائرنگ کے نتیجے میں عبدالبصیر جاں بحق،جبکہ محیب اللہ زخمی

اس بناء پر حکومت کو اس جانب توجہ دینی چاہیے , طلباء کے مستقبل کو مد نظر رکھتے ہوئے اس گھمبیر صورت حال کا  حکومت فوری نوٹس لیں.

پاکستان تحریک انصاف تخت نشین ہونے سے قبل ان کے وعدے اس جانب اشارہ دے رہی تھی کہ وہ نوجوانوں کو روزگار دے کر ان کی مستقبل سنواریں گی لیکن بدقسمتی سے نئے پاکستان کا پہلا سال ملک کے بے روزگار نوجوانوں کے لئے بدسے بدتر ہوتا جا رہا ہے. بجائے مزید نوکریاں دینے کے موجودہ نوکریاں بھی چھین لی جارہی ہے…

جس سے تعلیم یافتہ نوجوان طبقہ مایوسی کا شکار ہوکر زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھتے ہیں.پچھلے دنوں اسی صورتحال کا سامنا کرتے ہوئے  قبائیلی ضلع باجوڑ تحصیل لوئی ماموندسے  تعلق رکھنے والے نوحوان مائیکروبیالوجسٹ ذاکر اللہ بے روزگاری سے دل برداشتہ ہو کر اپنی زندگی کا چراغ گل کیا.

ایک بہت بڑا المیہ جو بے روزگاری کے صورت میں بے متاثر تعلیم یافتہ نوجوان نہ صرف منشیات،آئس نشہ اور دیگر جرائم کی لت میں بری طرح مبتلا ہورہے ہیں  بلکہ نوجوانوں میں خودکشی کا رجحان بھی تیزی سے بڑھ رہا ہے جو کہ حکومت سمیت پوری سماج کے لئے لمحہ فکریہ ہے۔

مزید:باجوڑ:ماموند ترخو میں مسخ شدہ لاش برآمدم

 پاکستان تحریک انصاف نے الیکشن سے قبل جو وعدے کئے تھے مرکز اور صوبوں کی حکومتیں ملنے کے بعد اب حکومت اپنے وعدوں کو عملی جامہ پہنانے کے لیے اقدامات کریں.

 اگر تبدیلی سرکار نے اس جانب توجہ نہ دیں تو یقینا موجودہ حکومت کا حال بھی ماضی کے حکمرانوں سے مختلف نہیں ہوگا جنہیں عوام نے ردی کے ٹھوکریں میں پھینک دیا ہیں…

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.