صوبائی حکومت: معدنیاتی ترمیمی بل کے خلاف مختلف سیاسی و سماجی تنظیموں کے رہنماؤں کا احتجاجی مظاہرہ

0

سلیمان خان مہمند

ضلع مہمند: صوبائی حکومت کی جانب سے معدنیاتی ترمیمی بل کے خلاف مختلف سیاسی و سماجی تنظیموں کے رہنماؤں کا احتجاجی مظاہرہ کیا، مظاہرین کا پشاور باجوڑ مین شاہراہ پر دھرنا دیا۔ باجوڑ مین شاہراہ کو ایک گھنٹے کیلئے بند رکھا۔

حکومت نے مزکورہ بل کے تحت قبائلی علاقوں میں موجود معدنیات پر ڈاکہ ڈالا ہے، حکومت فوری طور پر مزکورہ ترمیمی بل کو واپس لے، برطرف خاصہ دار کو فوری طور پر بحال کیا جائے، پاک افغان سرحدی شاہرہ گورسل گیٹ کو تجارت کے لئے کھولا جائے اور فاٹا انضمام میں قبائلی عوام کے ساتھ جتنے وعدے کئے ہیں وہ وعدے پورے کیے جائے، مظاہرین

غلنئی بازار میں مہمند پریس کلب کے سامنے مختلف سیاسی وسماجی رہنماؤں پی پی پی کے جنگريز خان، میں لال بادشاہ، ملک صدبر خان، فردوس خان صافی، میر افضل مہمند اور فضل ہادی نے معدنیات ترمیمی بل کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا اور پشاور تا باجوڑ مین شاہراہ پر دھرنا دیا اور ایک گھنٹہ کیلئے ٹریفک کو بند رکھا۔

مقررین نے کہا کہ صوبائی حکومت نے فاٹا انضمام کے اڑ میں معدنیات ترمیمی بل کے زریعے قبائلی وسائل پر ڈاکہ ڈالنے کی کوشش کی ہے جو کہ قبائل عوام مکمل طور پر مسترد کرتے ہیں اور حکومت کو خبردار کرتے ہیں کہ مذکورہ ترمیمی بل واپس لیں ورنہ پورے قبائلی اضلاع سے احتجاجی تحریک شروع کریں گے۔

اس موقع پر مظاہرین نے ضلع مہمند میں سینکڑوں برطرف خاصہ دار فورسز کی دوبارہ بحالی اور پاک افغان تجارتی گیٹ گورسل کو کھولنے کا بھی پُرزور مطالبہ کیا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.