کرسچن برادری ، تین روزہ علامتی ہڑتال کے بعد کام نہ کرنے کا اعلان

0

ایجنسی ہیڈکواٹر ہسپتال میں کرسچن برادری کے لیے مختص خالی پوسٹوں پر فوری طور پر تعیناتی کیجائے، سویپرز کا تین روزہ علامتی ہڑتال کے بعد کام نہ کرنے کا اعلان
باجوڑ ایجنسی:۔ ان خیالات کا اظہار کرسچن سویپرز یونین کے صدر نے اپنے ساتھیوں سمیت باجوڑ پریس کلب میں اخباری بیان میں کیا۔ انہوں نے کا کہنا تھا کہ ہسپتال میں سویپر کے سیٹس صرف کرسچن برادری کے لیے مختص ہیں ، کچھ قبضہ فروش آفیسروں نے ان پر مسلمان افراد کو تعینات کروایا تھا جس کے خلاف ہم نے ہائیکورٹ میں اپیل دائر کی ، 8ماہ قبل 8 مارچ کو پشاور ہائیکورٹ نے دارالقضاء سوات کے آرڈر کے مطابق فیصلہ دیتے ہوئے حکم جاری کیا کہ مذکورہ پوسٹوں پر تعینات افراد کو ان آردلی کے عہدے پر ترقی دی جائے اورمذکورہ سیٹیں کرسچن برادری کے لیے خالی کردی جائے اورعدالت نے اپنے فیصلے میں یہ بھی لکھا کہ آئندہ کے لیے ان پوسٹوں پر مسلمان افرا د کو تعینات نہ کیا جائے۔ آٹھ ماہ گذرنے کے باوجود عدالتی حکم پر عمل درآمد نہیں ہوا، انہوں نے مزید کہا کہ فی الحال پورے ہسپتال میں صرف 10 سویپر صفائی پر معمول ہیں جن کے لیے سینکڑوں کنال پر مشتمل ہسپتال کی صفائی ان کم افراد کے ساتھ سرانجام دینا ناممکن ہیں۔ کئی جھوٹوں وعدوں کے بعد ٓج سے ہم نے بازوں پے سیاہ پٹیاں باندھ کر علامتی بائیکاٹ کا آغاز کیا ہے جو تین دن تک جاری رہے گا۔ اگر حکومت نے 19تاریخ تک مذکورہ 24پوسٹوں پر ہمارے ساتھیوں کو تعینات نہیں کیا تو اس کے بعد احتجاجاً ہم کام روک دیں گے اور یہ احتجاج اس وقت تک جاری رہے گا جب تک ہمارے مطالبات تسلیم نہیں کیے جاتے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.