فاٹا میں این جی اوز میں تمام نان لوکل افراد کو نکال کر لوکل افراد بھر تی کی جائے :حضرت یوسف دانش

0

باجوڑ (قیاس خان)فاٹا پیس ارگنائز یشن کے مرکز ی صدر حضر ت یوسف دانش نے پر ہجوم پر یس کانفرنس سے خطاب کر تے ہوئے کہا کہ فاٹا پیس ارگنائز یشن نے تمام مرکزی اور علاقائی یونٹ اور کابینے تحلیل کر نے کا اعلان کیا جبکہ نئے کابینے نومبراور دسمبر کے آخر تک دوبارہ تشکیل دی جائیگی فاٹا پیس ارگنائزیشن کے بانی حضرت یوسف دانش نے پر یس کانفرنس کے دوران حکومت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ فاٹا کوفی الفور کے پی کے میں ضم کیا جائے اور ہمیں بھی عام پاکستانی کا حق دیا جائے کیوں کہ ہم بھی پاکستانی ہیں حضرت یوسف دانش نے باجوڑ ایجنسی میں اعلان کردہ دو کالجوں پر فوراََکام شروع کرنے کا مطالبہ کیااور اس میں جو روکاوٹیں ڈال رہے ہیں اس کو بے نقاب کیا جائے کیوں کہ ہمارے پسماندہ علاقوں میں تعلیم کی کمی کے وجہ سے دہشت گردی اور اوراہ گردی کے طرف ہمارے نوجوانان مائل ہورہے ہیں لہذا ان کالجوں کے وجہ سے یہ نوجوانان برائی سے بچ سکتے ہیں۔
پولٹیکل سکالر شپ تمام ڈیپارٹمنٹ کیلئے بحال کیا جائے اور ساتھ ہی تمام فاٹا میں نئی سکولزاور کالجز کا قیام عمل میں لایا جائے تاکہ پاکستان کے دوسرے علاقوں کی طرح فاٹا کے لوگ بھی با آسانی اپنے علاقوں میں تعلیم حاصل کر یں اور فاٹا میں جیتنے بھی پوسٹیں خالی پڑی ہے اس کو ایڈروٹائز کیا جائے اور تمام خالی پوسٹوں پر میر ٹ پر بھر تی کیا جائے فاٹا پیس ارگنائز یشن کے بانی حضرت یوسف دانش نے چائلڈ لیبر کے حوالے سے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ چائلڈ لیبر پر پابندی لگائے جائے اور ان بچوں کو تعلیم کے ساتھ ساتھ وظیفہ بھی مقرر کیا جائے تاکہ ہمارا معاشرہ تعلیم یافتہ معاشرہ بن جائے انہوں نے گورنر خیبر پختون خواہ اور فاٹا کے تمام ایم اینز اور پولٹیکل ایجنٹوں سے مطالبہ کیا کہ وہ فاٹا میں این جی اوز میں تمام نان لوکل افراد کو نکال کر لوکل افراد بھر تی کی جائے حضرت یوسف دانش نے باجوڑ ایجنسی کے پولٹیکل ایجنٹ انجنئر عامر خٹک سے مطالبہ کیا کہ باجوڑ ایجنسی میں دہشت گردی سے شہید ہونے والے افراد کے بچوں کیلئے مقرر کیا گیا ماہانہ وظیفہ دوبارہ بحال کیا جائے کیوں کہ گزشتہ کئی مہینوں سے ان شہداء کے بچوں کو ماہانہ وظیفہ نہیں دیا جارہاہے جس کی وجہ سے ان شہدا کے بچے انتہائی مشکل زندگی گزار رہے ہیں چونکہ ان کے والدین نے علاقے کے امن کیلئے اپنے جانوں کا نظرانہ پیش کیا ہیں کیو ں کہ پولٹیکل ایجنٹ نے فنڈ کا بہانہ بنا کر بند کیا ہوا ہے جب کہ اس سے سخت سے سخت حالات میں بھی کسی دوسرے پولٹیکل ایجنٹ نے شہدا ء کے بچوں کا ماہانہ وظیفہ بند نہیں کیا تھاحضرت یوسف دانش نے کہا کہ باجوڑ ایجنسی میں تعلیم اور صحت کا معیار انتہائی کمزورہیں باجوڑ ایجنسی میں تیرہ لاکھ آبادی کے لئے ایک گرلزکالج ہیں جس میں سٹاف کی کمی ہیں اور جو ٹیچرز ہے وہ بھی اعلیٰ کوالیفائیڈ نہیں ہیں جس کی وجہ سے ہمارے خواتین کی تعلیم بھی بہت کمزور ہیں
اس کے علاوہ حضرت یوسف دانش نے مطالبہ کیا کہ جن علاقوں میں موبائل سروس ابھی تک بحال نہیں ہوا ہے ان کو بحال کیا جائے اور آل باجوڑ میں تری جی کو بحال کیا جائے اور علاقہ امن کا گہوارہ بننے کے باوجود بھی چونکہ ابھی تک موٹرسائکل پر پابندی ہے اس کو آزاد کیا جائے

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.