باجوڑ کے اکثر علاقوں میں بجلی غائب پینے کا پانی ناپید عوام مشکلات سے دوچار۔

0

شیرزادہ

خار: ضلع باجوڑ میں گذشتہ تین دن سے بجلی غائب  ، کوروناوبا  کے نفسیاتی دباو سے  دوچار اور مہنگائی سے پریشان قبائلی ضلع باجوڑ کے عوام آج کل لوڈشیڈنگ کا رونا رو رہی ہیں ۔ کیونکہ نظام زندگی کا زیادہ تر انحصار بجلی پر منحصر ہے ، اگر چہ شمسی توانائی کی آمد سے صاحب استطاعت طبقے کو ایک حد تک سہولت دستیاب ہے لیکن بیشتر لوگ روایتی بجلی پر روزگار زندگی چلاتےہیں ۔

گھریلو آلات جیساکہ پانی کی ترسیل کا نظام ،گھروں میں گرم پانی ،روشنی ،مواصلاتی نظام و دیگر ضروریات زندگی بجلی سےمنسلک ہیں ۔ باجوڑ ٹائمز سے بات کرتے ہوئے  شنڈی موڑ تحصیل خار سے تعلق رکھنے والے شہری جو کہ پیشے کے لحاظ سے رکشہ ڈرائیور ہے ،نے بتایا "گذشتہ تین دنوں سے بجلی غائب ہے ،گھر میں پینے کا پانی تک نہیں ہے ،اب بندہ جائے تو کہاں جائے "۔ اسی طرح علاقہ ڈاگقلعہ  تحصیل خار سے رکھنے والے ایک بزرگ شہری نے بتایا کہ ہمارے ہاں بھی بجلی غائب ہے ، ” ایک طرف سکولوں میں کرونا وباءکی وجہ سے بچوں کی پڑھائی متاثر ہوئی ہے تودوسری طرف ٹیسکوں کی ناروا لوڈشیڈنگ کی وجہ سے زندگی عذاب بن گئی ہے،دو ہفتے پہلے ہی ٹیسکو باجوڑ کی انتظامیہ کو بجلی بحال کرنے کیلئے  علاقے کے عمائدین راضی کیا تھا -لیکن آج  پھر وہی حال ہے،بجلی غائب ہے”۔

یاد رہے کہ گذشتہ ہفتے خار بازار کی تاجر برادری اور خار ٹاون کے مکینوں نے احتجاج اور خار بازار کو بند کرنے کی دھمکی دی تھی۔ تاہم اسٹنٹ کمیشنر خار فضل الرحیم کی مصالحتی کوششوں اور یقین دھانی پر احتجاج ملتوی کیا گیا۔

قبائلی ضلع باجوڑ میں عوام اکثر ٹیسکو(TESCO)کے عملہ پر مقامی ماربل کارخانوں ،فیکٹریوں اور برف خانوں سے بھاری رقوم ہڑپ کرنے اور مقامی آبادی کی ایکٹریسٹی ٹرانسمیشن لائنز سے بجلی کارخانوں و فیکٹریوں کو منتقل کرنے کے الزامات لگاتے ہیں۔

ضلع باجوڑ میں بجلی کی طویل لوڈشیڈنگ پرانا مسئلہ ہے ،اگرچہ 166 کے وی گرڈ اسٹیشن کا افتتاح مختلف ادوار میں ممتاز مقامی  سیاسی شخصیات و سرکاری پروٹوکول سے لیس مہمان وفود کی طرف سے پانچ سے زیادہ مرتبہ  کیا جاچکا ہے لیکن تاحال اس سے بجلی کی ترسیل شروع نہیں ہوسکی ہے

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.